کلام ۔نصراللہ خان ناصر

بے یارو مدد گار ھیں پر یار بہت ھیں
صد شکر کہ اطراف میں اشجار بہت ھیں

بے شک ھے بپا طرب تماشا میرے ھر سُو
پر اشک بہانے کو بھی تہوار بہت ھیں

برسوں میں کوٸی چین کا لمحہ نہیں ملتا
ھر پل کسی طوفان کے آثار بہت ھیں

اُس شہرِ محبت کا عجب حال ھُوا ھے
تاجر ھیں بہت بھیڑ ھے بازار بہت ھیں

چاھت ھے تیری کیا نہیں معلوم کسی کو
حیرت ھے ترے طالبِ دیدار بہت ھیں

اب کوچ کا سامان کٸیے بیٹھے ھیں ناصر
ھم لوگ تیرے شہر سے بیزار بہت ھیں

نصراللہ خان ناصرذ

اپنا تبصرہ بھیجیں